Breaking News
Voice of Asia News

صحت کا علمی دن اور ہمارا نظام صحت

پاکستان سمیت دنیا بھر میں صحت کا عالمی دن ”ورلڈ ہیلتھ ڈے“ 7اپریل کو بھرپور طریقے سے منایاجاتا ہے پاکستان میں صحت کی سہولیات پر لکھنے سے پہلے ایک چھوٹی سی بات کرنا چاہتا ہوں کہ جاوید ہاشمی سے لیکر چودھری نثار تک ن لیگ چھوڑنے والے کسی نے آج تک نہیں کہا کہ میاں صاحب کرپٹ ہیں یا غدار جبکہ دوسری طرف اکبر بابر سیجسٹس وجیہہ،حامدخان اورعائشہ گلا لئی سے لیکر علیم خان تک جس نے بھی پارٹی چھوڑی سب کہتے ہیں کپتان کے خلاف ہوگئے اور خلاف بھی ایسے ہوئے کہ جذبات میں وہ باتیں بھی کر گئے جو حقیقت کے قریب ترین بھی نہیں ان افراد کو عمران خان کا قرب حاصل ہوا تو مشہور ہوگئے یہاں تک کہ عمران خان کے ساتھ لگے تو خانہ کعبہ کے اندر تک پہنچ گئے ناشکرے ایسے کہ ہر تہمت اپنے محسن پر لگا دی ان میں سے کچھ افراد گمنامی میں چلے گئے اور باقی بھی جانے والے ہیں آئندہ عمران خان کو اپنے ساتھ بندے نتھی کرنے سے پہلے سوچنا ہوگا اب آتے ہیں صحت کے عالمی دن پر اس دن کے منانے کا مقصد دنیا بھر کے لوگوں کو صحت کی اہمیت سے آگاہ کرنا ہے۔اس سلسلہ میں ملک بھر میں وزارت صحت،محکمہ صحت پنجاب،پاکستان میڈیکل ایسوی ایشن،دیگر طبی تنظیموں اور این جی اوز کے زیر اہتمام واکس،سیمینارز،کانفرنسز اور دیگر تقریبات کا اہتمام کیا جاتا ہے جس میں صحت مند زندگی گزارنے کی سنہری اصولوں بارے آگاہی دی جاتی ہے اور ماہرین اپنے مقالے پیش کرتے اور خبارات خصوصی مضامین شائع کرتے ہیں دنیا بھر میں صحت کا عالمی دن سب سے پہلے 1950ء میں منایا گیا 1948ء میں عالمی ادارہ صحت (WHO) کے ذیلی ادارے ہیلتھ اسمبلی نے ہر سال 7اپریل کو صحت کا عالمی دن منانے کی منظوری دی تھی جس کے بعد دنیا بھر میں 7اپریل کو ”ورلڈ ہیلتھ ڈے“ منایا جاتا ہے پاکستان میں صحت کے ڈھانچہ کو دیکھا جائے تو ہمارے ہاں 1201 ہسپتال، 5518 بنیادی صحت کے یونٹس، 683 دیہی مراکز صحت، 5802 ڈسپنسریاں، 731 زچگی و بچوں کے صحت کے مراکز اور 347 ٹی بی مراکز پر ہیں اور ان صحت کی سہولیات میں بستروں کی کل دستیابی کا تخمینہ 123394 ہے جبکہ ایک لاکھ سے زیادہ لیڈی ہیلتھ ورکرز شامل ہیں جو پورے پاکستان میں خدمات فراہم کر رہی ہیں ان بنیادی صحت کی دیکھ بھال کی خدمات کو ریفرلز کے لیے تحصیل اور ضلع کی سطح پر 989 سیکنڈری کیئر ہسپتالوں کے نیٹ ورک کی مدد حاصل ہے پاکستان میں بنیادی صحت کی دیکھ بھال کی خدمات کی فراہمی کے لیے BHUs کا ایک جامع نیٹ ورک موجود ہے سب سے زیادہ آبادی والا صوبہ پنجاب کے عوام کو معیاری خدمات فراہم کرنے والے اعلیٰ معیار کے سرکاری اور نجی ہسپتالوں کے لیے مشہور ہے۔ 2017 میں پنجاب میں 88 تحصیل لیول ہسپتال (THQ)، 34 ڈسٹرکٹ ہسپتال (DHQ) اور 23 تدریسی ہسپتال تھے پاکستان میں اس وقت رجسٹرڈ ڈاکٹروں کی تعداد تقریباًڈیڑھ لاکھ ہے۔ ایک اندازے کے مطابق تقریباً 30ہزار پاکستانی ڈاکٹر بیرون ملک کام کر رہے ہیں اور تقریباً 22کروڑ کی آبادی کے لیے سوا لاکھ ڈاکٹر ہیں جوتقریبا 1764 افراد کے لیے ایک ڈاکٹر کا تناسب بنتا ہے بدقسمتی سے پاکستان میں زیادہ تر حکمرانوں نے صحت کی طرف توجہ نہیں دی کیونکہ وہ خود تو اپنا علاج کروانے باہر بھاگ جاتے تھے اور غریب عوام کو مرنے کے لیے سرکاری ہسپتالوں میں وحشی اور قصائی نما ڈاکٹروں کے حوالے کردیتے تھے پاکستان کو بنے ہوئے 75سال ہوگئے اور ایک بھی ایسا ہسپتال نہیں بن سکا جس میں امیر،سرمایہ دار یا حکمران اپنا علاج کرواسکے آج جتنے بھی بڑے بڑے ہسپتال ہیں وہ سب کے سب قیام پاکستان سے پہلے کے بنے ہوئے ہیں میو ہسپتال لاہور پاکستان کے قدیم اور بڑے ہسپتالوں میں سے ایک ہے کنگ ایڈورڈ میڈیکل یونیورسٹی جو جنوبی ایشیا کے سب سے پرانے اور معتبر طبی اداروں میں سے ایک ہے میو ہسپتال سے منسلک ہے میو ہسپتال پرانے لاہور کے قلب میں واقع ہے اس میں بہت سے مختلف وارڈز بھی ہیں اس ہسپتال کی عمارت 1870 میں ڈیڑھ لاکھ روپے کی کی لاگت سے مکمل ہوئی اور اس نے 1871 میں کام شروع کیا۔ ہسپتال کا نام اس وقت کے برطانوی ہندوستان کے وائسرائے ”رچرڈ بورکے میو کے چھٹے ارل” کے نام پر رکھا گیا جسے مقامی طور پر بھی جانا جاتا ہے۔ جیسا کہ لارڈ میو یہ ہسپتال اس وقت پنجاب کے 70 ہزار لوگوں کی ضرورت پوری کرنا تھا۔ ہسپتال 3 خصوصیات (جنرل میڈیسن، جنرل سرجری، آنکھ اور Ent) کے ساتھ شروع ہوا ہسپتال کا فن تعمیر اطالوی ہے جسے پوڈون نے ڈیزائن کیا تھا اور اس وقت کے معروف معماروں میں سے ایک رائے بہادر کنہیا لال نے انجینئر کیا تھا تاہم تعمیراتی اثر قرون وسطی کے اسپتالوں سے ملتا جلتا ہے جو ق…

image_pdfimage_print
شیئرکریں