Voice of Asia News

سرکارِ دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم پر ہماری جانیں قربان

پاکستان سمیت دنیا بھر میں بھارت کے خلاف احتجاجی مظاہرے شروع ہوچکے ہیں جبکہ دوسری طرف بھارت میں نہ صرف مسلمانوں بلکہ اقلیتوں کے لیے زمین تنگ کی جاری ہے مسلمانوں پر مقدمات درج کر کے ان کو گرفتار کیا جارہاہے بھارت کے اس ظالمانہ اقدام کے خلاف نہ صرف بھارت بلکہ پوری مسلم ممالک میں شدید غم وغصہ روز پکڑنا شروع ہو چکا ہے پاکستان میں بھی بھارت کے مذہبی مخالف بیانات کے خلاف شدید احتجاج ریکارڈ بھی کروایا اور مسلم امہ کو بھی بھارت کے خلاف احتجاج کو بھی مؤثر طریقے سے کرنے کے لیے روزدیا جبکہ اس وقت کشمیر سمیت پورے بھارت میں احتجاج زور پکڑ چکی ہے اور بھارت دنیا سے کٹ ہونے میں چند قدم کے فاصلے پر رہ گیا ہے اور دنیا کے تیزی سے بدلتے ہوئے حالات بھارت کے لیے مشکلات میں اضافہ کررہا ہے بھارت کی حکمران پارٹی کے ترجمان کی طرف گستاخانہ بیانات جو ردعمل خلیجی ممالک کے طرف سے آیا ہے اسکی ماضی میں مثال نہیں ملتی اک نظر خلیجی ممالک کے اقدام ڈالتےہیں
خلیجی ممالک میں ’بائیکاٹ انڈیا‘ مہم، سپر اسٹورز سے احتجاجاً بھارتی اشیا ہٹا دی گئیں بھارتی حکمران جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی (پی جے پی)
کے رہنماؤں کی جانب سے توہین رسالت ﷺ پر سعودی عرب، بحرین اور کویت میں بائیکاٹ انڈیا کی مہم شروع ہوگئی۔
قطر اور کویت نے بی جے پی رہنماؤں کے گستاخانہ بیانات پر بھارتی حکومت سے معافی کا مطالبہ کیا ہے۔مسلم دشمنی کو شہہ دینے والے مودی کو او آئی سی اور سعودی عرب سمیت مختلف ملکوں کی جانب سے مذمتوں کا سامنا ہے جبکہ حکمراں جماعت بی جے پی کی ترجمان کی ہرزہ سرائی پر مسلم دنیا میں اشتعال بڑھنے لگا۔
ایران، قطر اور کویت نے بھارتی سفیروں کو طلب کرکے بی جے پی ترجمان کی گستاخی پر شدید احتجاج کیا۔
اسلامی تعاون تنظیم نے بھی مذمتی بیان میں کہا ہے کہ توہین آمیز بیان دینے والوں کی پشت پناہی کرنے والوں کا احتساب کیا جائے۔
اس کے علاوہ انڈونیشیا کی جانب سے بھی شدید ردعمل کا اظہار کیا گیا ہے۔ انڈونیشیا کی وزارت خارجہ نے اپنے بیان میں بھارتی سیاست دانوں کی طرف سے پیغمبراسلام کیخلاف ناقابل قبول توہین آمیز ریمارکس کی شدید مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ مذمتی پیغام جکارتہ میں بھارتی سفیر کو پہنچا دیا گیا ہے۔دوسری جانب سعودی عرب، بحرین اور کویت میں بائیکاٹ انڈیا کی مہم شروع ہوگئی ہے اور سپر اسٹورز سے احتجاجاً بھارتی اشیا ہٹا دی گئیں ہیں۔
مفتی اعظم عمان احمد بن حمد الخليلی نے بھی بھارتی اشیا کے بائیکاٹ کی اپیل کی ہے۔خیال رہےکہ بی جے پی کی ترجمان نوپور شرما نے ایک ٹی وی چینل کے پروگرام میں اسلام اور نبی کریمﷺکے حوالے سے متنازع گفتگو کی تھی۔
بی جے پی کی ترجمان کے گستاخانہ بیان پر بھارت اور بیرون ملک شدیدغم وغصےکا اظہارکیا جارہا ہے۔اگر اسی طرح گستاخانہ بیانات پر مسلم امہ اکھٹی ہو کر یک زبان سے ایسے لوگوں کے خلاف آواز بلند کرے تو ممکن ہے کہ کوئی بھی انبیاء کے خلاف گستاخی نہ کرے یہ سب متحد ہونے کی بات ہے سرکارِ دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم پر ہماری جانیں قربان۔

image_pdfimage_print
شیئرکریں